اُسے پتہ تھا میں دنیا نہیں محبت ہوں Ali Zaryoun Urdu Ghazal 2022

Spread the love

زنِ حسین تھی اور پھول چُن کے تھی
میں شعر کہتا تھا وہ داستاں تھی

وہ رنگِ بہت چمکتا تھا
بوقتِ فجر وہ جب حمد تھی

عرب لہو تھا رگوں میں بدن سنہرا تھا
وہ نہیں تھی تھی

منافقوں کو میرا نام زہر لگتا تھا
وہ جان بوجھ کر غصہ انہیں تھی

علی سے دور رہو لوگ ﺍُﺳﮑﯽ سے کہتے تھے
وہ میرا سچ ہے بہت کر تھی

علی یہ لوگ تمہیں جانتے نہیں ہیں ابھی
گلے لگا کے میرا حوصلہ تھی

اُسے پتہ تھا میں دنیا نہیں محبت ہوں
وہ میرے سامنے کچھ بھی نہیں تھی

یہ پھول دیکھ رہے ہو یہ ﺍُﺳﮑﯽ کا لہجہ تھا
یہ دیکھ رہے ہو یہاں وہ تھی

اُسے کسی سے محبت تھی اور وہ میں نہیں تھا
یہ بات مجھ سے زیادہ اُسے تھی

میں ﺍُﺳﮑﯽ کے بعد کبھی ٹھیک سے نہیں جاگا
وہ مجھ کو خواب نہیں سے تھی

میں کچھ بتا نہیں سکتا وہ میری کیا تھی علی
کہ ﺍُﺳﮑﯽ کو دیکھ کے بس اپنی یاد تھی

اُسے پتہ تھا میں دنیا نہیں محبت ہوں Ali Zaryoun Urdu Ghazal 2022