دکھائی سب کو نہ دے یار بھی کسی کا نہ بن Ali Zaryoun Urdu Ghazal 2022

Spread the love
Dekhai sub ko na dy yar bhi kisi ka na ban
Yeh roshni bhi andhera hai roshni ka na ban
Ab wo fakhar cy kehty hain yar hai apna
Kabhi jinhon ny kaha tha ky shayari ka na ban
Khuda ko beach mazay cy mujhy na lecture dy
Tu admi hi nahi hai soo admi ka na ban
Wohi udas si larki teri mohabbat hai
Usi ko dhund kisi bhi bani thani ka na ban
Bila sawal usy keh diya nikal yahan cy
Ky jis kisi ny mujh cy kaha Ali ka na ban
دکھائی سب کو نہ دے یار بھی کسی کا نہ بن Ali Zaryoun Urdu Ghazal 2022
دکھائی سب کو نا دے یار بھی کسی کا نا بن
یہ روشنی بھی اندھیرا ہے روشنی کا نا بناب وہ فخر کی کہتے ہیں یار ہے اپنا
کبھی جنہوں نے کہا تھا کے شاعری کا نا بن

خدا کو بیچ مزے کی مجھے نا لیکچر دے
تو آدمی ہی نہیں ہے سو آدمی کا نا بن

وہی اُداس سی لڑکی تیری محبت ہے
اسی کو دھند کسی بھی بنی ٹھانی کا نا بن

بلا سوال اسے کہہ دیا نکل یہاں کی
کے جس کسی نے مجھ کی کہا علی کا نا بن