Allama Iqbal Poetry | Allama Iqbal Shayari in Urdu

Spread the love

Are You Searching For Allama Iqbal Poetry | Allama Iqbal Poetry Shayari in Urdu?

Wait Wait !!! You are in the right place.

shayariurdu.org is sharing the Best Allama Iqbal Poetry collection with you. Beautiful Shayari in Urdu Wasi Shah Two Lines SMS poetry in Urdu with HD images for Facebook.

Allama Iqbal is the best collection of poetry, ghazal, nazm in Urdu, Hindi, English Read more about Allama Iqbal and access their famous shero Shayari.

Read Beautiful Allama Iqbal Poetry Shayari in Urdu; share it with your girlfriend or boyfriend that expresses your Love emotions. Share Romantic Poetry Images on social media like Facebook, Twitter, Instagram, Whatsapp.

Haya Nahin Hai Zamane ki Aankh Men baaqi
Khuda Kare Ki Javani Teri Rahe Be-Dagh

حیا نہیں ہے زمانے کی آنکھ میں باقی
خدا کرے کہ جوانی تری رہے بے داغ

 

Aqal Ko Tanqeed Se Fursat Nahi,
Ishq Per Aamal Ki Buniyaad Rakh

Allama Iqbal Poetry

عقل کو تنقید سے فرصت نہیں

عشق پر اعمال کی بنیاد رکھ

Dil Se Jo Baat Nikalti Hai Asar Rakhti Hai
Par Nahi Taqat-e-parvaz Magar Rakhti Hai

دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے
پر نہیں طاقت پرواز مگر رکھتی ہے

Ilm Men Bhi Surur Hai lekin
Ye Vo Jannat Hai Jis Men Huur Nahin

علم میں بھی سرور ہے لیکن
یہ وہ جنت ہے جس میں حور نہیں

 

Nahin Tera Nasheman Qasr-e-Sultani Ke Gumbad Par
Tu Shahin Hai Basera kar Pahadon Ki Chatanon Men

نہیں تیرا نشیمن قصر سلطانی کے گنبد پر
تو شاہیں ہے بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں میں

Hazaron Saal Nargis Apni Be-Nuri Pe Roti Hai
Badi Mushkil se Hota Hai Chaman Men Dida-var Paida

ہزاروں سال نرگس اپنی بے نوری پہ روتی ہے
بڑی مشکل سے ہوتا ہے چمن میں دیدہ ور پیدا

Nasha Pila Ke Girana To Sab Ko Aata Hai
Maza To Tab Hai Ki Girton Ko Thaam Le Saaqi

نشہ پلا کے گرانا تو سب کو آتا ہے
مزا تو تب ہے کہ گرتوں کو تھام لے ساقی

 

Tu Shahin Hai Parvaz Hai Kaam Tera
Tere Samne Asman Aur Bhi Hain

 

تو شاہیں ہے پرواز ہے کام تیرا

ترے سامنے آسماں اور بھی ہیں

Tere Ishq Ki Inteha Chahta Huun
Meri Sadgi Dekh Kya Chahta huun

 

sitam ho ki ho vada-e-be-hijabi
koi baat sabr-azma chahta huun

ye jannat mubarak rahe zahidon ko
ki main aap ka samna chahta huun

zara sa to dil huun magar shoḳh itna
vahi lan-tarani suna chahta huun

koi dam ka mehman huun ai ahl-e-mahfil
charagh-e-sahar huun bujha chahta huun

bhari bazm men raaz ki baat kah di
bada be-adab huun saza chahta huun

 

مری سادگی دیکھ کیا چاہتا ہوں

ستم ہو کہ ہو وعدۂ بے حجابی
کوئی بات صبر آزما چاہتا ہوں

یہ جنت مبارک رہے زاہدوں کو
کہ میں آپ کا سامنا چاہتا ہوں

ذرا سا تو دل ہوں مگر شوخ اتنا
وہی لن ترانی سنا چاہتا ہوں

کوئی دم کا مہماں ہوں اے اہل محفل
چراغ سحر ہوں بجھا چاہتا ہوں

بھری بزم میں راز کی بات کہہ دی
بڑا بے ادب ہوں سزا چاہتا ہوں

 

Maana Ki Teri Deed Ke Qabil Nahi Ho Main
Tu Mera Shauq Dekh Mera Intizar dekh

مانا کہ تیری دید کے قابل نہیں ہوں میں
تو میرا شوق دیکھ مرا انتظار دیکھ

 

Khudi Ko Kar Buland Itna Ki Har Taqdeer Se Pehle
Khuda Bande Se Khud Pochhe Bata Teri Raza Kya Hai

خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے بتا تیری رضا کیا ہے

 

Ghulami Mein Na Kaam Aati Hain Shamshiren Na Tadbiren,
Jo Ho Zauq-e-yaqin Paida Toh Kat Jaati Hain Zanjiren

غلامی میں نہ کام آتی ہیں شمشیریں نہ تدبیریں
جو ہو ذوق یقیں پیدا تو کٹ جاتی ہیں زنجیریں

 

Firqa-Bandi Hai Kahin Aur Kahin Zaatein Hain,

Kya Zamane Mein Panapne Ki Yehi Baatein hain

فرقہ بندی ہے کہیں اور کہیں ذاتیں ہیں
کیا زمانے میں پنپنے کی یہی باتیں ہیں

Faqat Nigah Se Hota Hai Faisla Dil Ka,

Na Ho Nigah Mein Shokhi Toh Dilbari Kya Hai

فقط نگاہ سے ہوتا ہے فیصلہ دل کا
نہ ہو نگاہ میں شوخی تو دلبری کیا ہے

 

KHudi ho ilm se mohkam to ghairat-e-jibril
Agar ho ishq se mohkam to sur-e-israfil

Azab-e-danish-e-hazir se ba-KHabar hun main
Ke main is aag mein Dala gaya hun misl-e-KHalil

Fareb-KHurda-e-manzil hai karwan warna
Zyyaada rahat-e-manzil se hai nashat-e-rahil

Nazar nahin to mere halqa-e-suKHan mein na baiTh
Ke nukta-ha-e-KHudi hain misal-e-tegh-e-asil

Mujhe wo dars-e-farng aaj yaad aate hain
Kahan huzur ki lazzat kahan hijab-e-dalil

Andheri shab hai juda apne qafile se hai tu
Tere liye hai mera shola-e-nawa qindil

Gharib o sada o rangin hai dastan-e-haram
Nihayat is ki husain ibtida hai ismail

 

خودی ہو علم سے محکم تو غیرت جبریل
اگر ہو عشق سے محکم تو صور اسرافیل

عذاب دانش حاضر سے با خبر ہوں میں
کہ میں اس آگ میں ڈالا گیا ہوں مثل خلیل

فریب خوردۂ منزل ہے کارواں ورنہ
زیادہ راحت منزل سے ہے نشاط رحیل

نظر نہیں تو مرے حلقۂ سخن میں نہ بیٹھ
کہ نکتہ ہائے خودی ہیں مثال تیغ اصیل

مجھے وہ درس فرنگ آج یاد آتے ہیں
کہاں حضور کی لذت کہاں حجاب دلیل

اندھیری شب ہے جدا اپنے قافلے سے ہے تو
ترے لیے ہے مرا شعلۂ نوا قندیل

غریب و سادہ و رنگیں ہے داستان حرم
نہایت اس کی حسین ابتدا ہے اسماعیل

 

Khudi ho ilm se mohkam to ghairat-e-jibril
Agar ho ishq se mohkam to sur-e-israfil

Azab-e-danish-e-hazir se ba-KHabar hun main
Ke main is aag mein Dala gaya hun misl-e-KHalil

Fareb-KHurda-e-manzil hai karwan warna
Zyaada rahat-e-manzil se hai nashat-e-rahil

Nazar nahin to mere halqa-e-suKHan mein na baiTh
Ke nukta-ha-e-KHudi hain misal-e-tegh-e-asil

Mujhe wo dars-e-farng aaj yaad aate hain
Kahan huzur ki lazzat kahan hijab-e-dalil

Andheri shab hai juda apne qafile se hai tu
Tere liye hai mera shola-e-nawa qindil

Gharib o sada o rangin hai dastan-e-haram
Nihayat is ki husain ibtida hai ismail

 

خودی ہو علم سے محکم تو غیرت جبریل
اگر ہو عشق سے محکم تو صور اسرافیل

عذاب دانش حاضر سے با خبر ہوں میں
کہ میں اس آگ میں ڈالا گیا ہوں مثل خلیل

فریب خوردۂ منزل ہے کارواں ورنہ
زیادہ راحت منزل سے ہے نشاط رحیل

نظر نہیں تو مرے حلقۂ سخن میں نہ بیٹھ
کہ نکتہ ہائے خودی ہیں مثال تیغ اصیل

مجھے وہ درس فرنگ آج یاد آتے ہیں
کہاں حضور کی لذت کہاں حجاب دلیل

اندھیری شب ہے جدا اپنے قافلے سے ہے تو
ترے لیے ہے مرا شعلۂ نوا قندیل

غریب و سادہ و رنگیں ہے داستان حرم
نہایت اس کی حسین ابتدا ہے اسماعیل

 

Andaz-e-bayan Garche Bahut Shauq Nahi Hai,

Shayad Ke Utar Jaye Tere Dil Mein Meri Baat

Allama Iqbal Poetry

انداز بیاں گرچہ بہت شوخ نہیں ہے

شاید کہ اتر جائے ترے دل میں مری بات

Amal Se Zindagi Banti Hai Jannat Bhi Jahanum Bhi

Yeh Khaki Apni Fitrat Mein Na Noori Hai Na Naari Hai

عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی

یہ خاکی اپنی فطرت میں نہ نوری ہے نہ ناری ہے

Aankh Jo Kuch Dekhti Hai Lab Pe Aa Sakta Nahi,

Mahv-e-Hairat Hun Ke Duniya Kya Se Kya Ho Jayegi

آنکھ جو کچھ دیکھتی ہے لب پہ آ سکتا نہیں

محو حیرت ہوں کہ دنیا کیا سے کیا ہو جائے گی

Sitaron Se Aagey Jahaan Aur Bhi Hain,

Abhi Ishq Ke Imtiha’n Aur Bhi Hain

ستاروں سے آگے جہاں اور بھی ہیں
ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں

 

Anokhi Waza Hai Saare Zamane Se Nirale Hain,

Yeh Aashiq Konci Basti Ke Ya Rab Rehne Wale Hain

انوکھی وضع ہے سارے زمانے سے نرالے ہیں
یہ عاشق کونسی بستی کے یا رب رہنے والے ہیں

 

Quwat e Ishq Se Har Past Ko Bala Kar De,

Dehr Mein Ism e Muhammad ( S.A.W ) Se Ujala Kar De

قوتِ عشق سے ہر پست کو بالا کردے
دہر میں اسمِ محمدؑ سے اُجالا کردے

 

Agar kaj-rau hain anjum aasman tera hai ya mera

Mujhe fikr-e-jahan kyun ho jahan tera hai ya mera

Agar hangama-ha-e-shauq se hai la-makan KHali

KHata kis ki hai ya rab la-makan tera hai ya mera

Use subh-e-azal inkar ki jurat hui kyunkarMujhe malum kya wo raaz-dan tera hai ya mera

Mohammad bhi tera jibril bhi quran bhi tera

Magar ye harf-e-shirin tarjuman tera hai ya mera

Isi kaukab ki tabani se hai tera jahan raushanZawal-e-adam-e-KHaki ziyan tera hai ya mera

اگر کج رو ہیں انجم آسماں تیرا ہے یا میرا

مجھے فکر جہاں کیوں ہو جہاں تیرا ہے یا میرا

اگر ہنگامہ ہائے شوق سے ہے لا مکاں خالی

خطا کس کی ہے یا رب لا مکاں تیرا ہے یا میرا

اسے صبح ازل انکار کی جرأت ہوئی

کیوں کرمجھے معلوم کیا وہ رازداں تیرا ہے
یا میرامحمد بھی ترا جبریل بھی قرآن بھی

تیرامگر یہ حرف شیریں ترجماں تیرا ہے یا میرا

اسی کوکب کی تابانی سے ہے تیرا جہاں روشن
زوال آدم خاکی زیاں تیرا ہے یا میرا

Chaye Shayari In Urdu – Chae Poetry 2022

If you like our Allama Iqbal Poetry | Allama Iqbal Poetry Shayari in Urdu – Allama Iqbal Poetry collection, share this with your friends and family and with your Poetry Lover friend on Facebook.