Hum un ki nazar mein bhi adakar huy hain علی زریون Urdu Ghazal 2022

Spread the love

Hum un ki nazar mein bhi adakar huy hain علی زریون Urdu Ghazal 2022

Hum un ki nazar mein bhi adakar huy hain
Jo log humain dekh ky fankar huy hian
Hum yunhi nahi seh ky azadar huy hain
Nasli hain soo asli ky paristar huy hain
Tohmat toh lga dety ho bekari ki hum pr
Pucho toh sahi kis liye bekar huy hain
Yeh wo hain jinhen main ny sukhan krna shikhaya
Yeh lehjay mery samny talwar huy hian
Milnay toh akely hi usy jana hai Zaryoun
Yeh dost magar kis liye tyar huy hain
Hum un ki nazar mein bhi adakar huy hain علی زریون Urdu Ghazal 2022
ہم ان کی نظر میں بھی اداکار ہوئے ہیں
جو لوگ ہمیں دیکھ کے فنکار ہوئے ہیںہم یونہی نہیں سہہ کے ایذا دار ہوئے ہیں
نسلی ہیں سو اصلی کے پرستار ہوئے ہیںتہمت تو لگا دیتے ہو بےکاری کی ہم پر
پوچھو تو سہی کس لیے بیکار ہوئے ہیں

یہ وہ ہیں جنہیں میں نے سخن کرنا شیخایا
یہ لہجے میرے سامنے تلوار ہوئے ہیں

ملنے تو اکیلے ہی اسے جانا ہے زاریون
یہ دوست مگر کس لیے تیار ہوئے ہیں