Udasiyun ko manaty hain, shair kehty hain اداسیوں کو مناتے ہیں شعر کہتے ہیں Urdu Ghazal 2022

Spread the love
Udasiyun ko manaty hain, shair kehty hain
Bujhy diyun ko jalaty hain, shair kehty hain
Humary nam py marty hu’uon ko kya maloom
Hum apni jan bachaty hain shair, kehty hain
Humari simat eshara kiya gya ky yeh log
Jab apni jan cy jaty hain shair kehty hain
Koi suny toh tamskhar urany lagta hai
Kisi kisi ko btaty hain shair kehty hain
وداسیون کو مناتی ہیں ، شعر کہتے ہیں
بوجحی دیون کو جلاتے ہیں ، شعر کہتے ہیںہمارے نم پائے مرتے ہو ’ او کو کیا معلوم
ہم اپنی جان بچاتی ہیں شعر ، کہتے ہیں

ہماری سمٹ اشارہ کیا گیا کے یہ لوگ
جب اپنی جان کی جاتے ہیں شعر کہتے ہیں

کوئی سونی تو تامسخار ورانی لگتا ہے
کسی کسی کو بتاتی ہیں شعر کہتے ہیں